27

پاکستان میں کرپشن چارجز پر سزائے موت کی سزا رکھی جائے،چیف جسٹس بلوچستان ہائیکورٹ

پاکستان میں کرپشن چارجز پر سزائے موت کی سزا رکھی جائے،چیف جسٹس بلوچستان ہائیکورٹ

کوئٹہ(گدروشیاپوائنٹ)چیف جسٹس بلوچستان ہائیکورٹ جسٹس نعیم اختر افغان نے کہا ہے کہ میرا یقین ہے کہ جسے اللہ کا خوف ہے وہ کرپشن نہیں کر سکتا،جو بھی کرپشن میں ملوث ہے اسے خدا کا خوف نہیں ہے۔

نیب قانون میں پلی بارگین اور والنٹیرئر ریٹرن کی شق کیوں رکھی گئی کیونکہ قانون سازوں نے خود اس میں یہ لکونا رکھا ہے، اگر پاکستان میں کرپشن چارجز پر سزائے موت کی سزا رکھی جائے تو پاکستان سے کرپشن کا خاتمہ ہو جائے گا۔

ہمارے تحقیقی افسران اور پراسیکیوٹرز زیادہ تربیت یافتہ نہیں ہیں، ججز کی بھی وائٹ کالر جرائم سے متعلق زیادہ تربیت نہیں ہے، ججز تقریر نہیں کرتے بلکہ فیصلہ دیتے ہیں، پاکستان اس وقت بین الاقوامی سطح پر مصالحتی کیسز میں بہت پیچھے ہے۔

موقر قومی اخبار کی رپورٹ کے مطابق سابق چیف جسٹس تصدق حسین جیلانی نے ریکوڈک کیس میں ہماری قانونی ٹیم کی کمزور تیاری کی نشاندہی کی، چیف جسٹس آف پاکستان اور فارن آفس کو درخواست کروں گا ججز اور جوڈیشل افسران کی بین الاقوامی ٹریننگ کا انعقاد کیا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں